شاعری

pictureملت کا پاسبان ہے محمد علی جناح

منظوم نظموں کا مجموعہ

مرتب : خورشید ربانی
ناشر : اکادمی ادبیات پاکستان
قیمت: 250 روپے
تشکیل ای بک: نوید فخر

حلیم قریشی

قائِد کے حضور

تمہارے بعد
یہ موسم سنورتا ہی نہیں
دیکھ میں آیا ہوں
مرے ہاتھوں میں
جتنے پھول ہیں
یہ کاغذی پودوں پہ کھلتے ہیں
نہ کھیتوں میں
کوئی زرخیز مٹی ہے
نہ پانی ہے
شجر سوکھے ہوئے پتوں کو
روتے ہیں
گلاب و یاسمن
کھلنے کی حسرت میں
کسی سوکھی ہوئی
ٹہنی کے ماتھے پر
لرزتے ہیں
ہوا تاریک گلیوں سے
گزرتی ہے
تو بے آواز روتی ہے
عجب کم بخت موسم ہے
گزرتا ہی نہیں
دیکھو میں آیا ہوں
اکیلا تھا
میں خود کو ساتھ لایا ہوں

صفحات : 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | 6 | 7 | 8 | 9 | 10 | 11 | 12 | 13 | 14 | 15 | 16 | 17 | 18 | 19 | 20 | 21 |
| 22 | 23 | 24 | 25 | انڈیکس |

تازہ ترین

کیا آپ صاحب کتاب ہیں؟

کیا آپ چاہتے ہیں کہ آپ کی تصنیف دنیا بھر میں لاکھوں شائقین تک پہنچے ؟ تو کتاب ”ان پیچ“ فارمیٹ میں اور سرورق سکین کر کے ہمیں ای میل یا ارسال کریں، ہم آپ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کریں گے۔

مزید معلومات کے لئے یہاں کلک کریں